Follow by Email

This is default featured post 1 title

Go to Blogger edit html and find these sentences.Now replace these sentences with your own descriptions.

This is default featured post 2 title

Go to Blogger edit html and find these sentences.Now replace these sentences with your own descriptions.

This is default featured post 3 title

Go to Blogger edit html and find these sentences.Now replace these sentences with your own descriptions.

This is default featured post 4 title

Go to Blogger edit html and find these sentences.Now replace these sentences with your own descriptions.

This is default featured post 5 title

Go to Blogger edit html and find these sentences.Now replace these sentences with your own descriptions.

Tuesday, 3 January 2012

Euro firms against dollar in Asian trade

SINGAPORE: The euro rebounded against the dollar in Asian trade Tuesday but ongoing worries over Europe's debt woes will see investors favouring the greenback over the long-term, analysts said.

The euro rose to $1.2985 from $1.2939, while the dollar was trading at 76.85 yen from 76.98 late Friday in New York. Markets were closed Monday and Tuesday in Japan for public holidays.

The European unit also firmed against the yen, changing hands at 99.79 against 99.62 late Friday.

"With the euro facing capitulation risks in (the first quarter), the first half of the year is likely to favour the US dollar as a safe haven currency," Singapore's DBS bank said in a commentary.

"The eurozone sovereign debt crisis is no longer only about the peripheral countries.

"Rating agencies have placed the whole region on negative watch including the AAA-rated core EU economies."

DBS bank said it expects the euro to decline to $1.20 by the end of this quarter.

The eurozone's still-unresolved fiscal woes have dented the single currency with Spain announcing Friday 8.9 billion euros in budget cuts and higher taxes as it moves to curb a bigger-than-expected public deficit.

Oil higher in Asia

SINGAPORE: Oil rose in Asian trade Tuesday, underpinned by positive economic data out of China and geopolitical tensions in the Middle East, analysts said.

New York's main contract light sweet crude for February delivery gained $1.45 to $100.28 and Brent North Sea crude for the same period put on $1.02 to $108.40.

"Prices have moved up as the market reacts to the expansion in manufacturing activity in China," said Victor Shum, senior principal at Purvin and Gertz international energy consultants.

"Geopolitical tensions over Iran has also supported the market," he told.

Official data released Sunday showed China's manufacturing activity rebounded in December helped by holiday shopping.

The purchasing managers' index (PMI) reached 50.3 in December, the China Federation of Logistics and Purchasing said. A reading above 50 indicates the sector is expanding.

China is the world's largest consumer of energy and as the number two economy globally has a huge impact on crude prices.

Traders on Tuesday were closely monitoring the situation in the Strait of Hormuz after Iran tested missiles near the strategic channel Monday.

The missile tests underlined Iran's threats to close the vital oil-transit waterway through which 20 percent of the world's oil flows through.

The US has warned it will not tolerate a closure of the strategic channel.

Rupee trades at record low of 90.20

KARACHI: The Pakistani rupee traded at a record low on Tuesday because of increased import payments and a deteriorating economic outlook, dealers said.

"The rupee was traded at 90.20 (to the dollar) and there were import payments of about $100 million," said a dealer at a foreign bank.

The rupee had traded at its previous record low of 90.03 on Wednesday.

The rupee ended at 90.11/16 to the dollar, compared with Friday's close of 89.95/90.00. Banks were closed on Monday.

There are concerns on the economic front as the country's current account deficit stood at $2.104 billion in July-Nov compared with $589 million in the same period a year earlier.

The deficit is likely to widen further in the coming months because of debt repayments and a lack of external aid.

The rupee weakened 4.82 percent in 2011, after losing 1.53percent in 2010. (Reuters)

World-first hybrid shark found off Australia

SYDNEY: Australian scientists hailed what they described as a world-first discovery of two shark species interbreeding Tuesday, a never-before-seen phenomenon which could help them cope with warmer oceans.

Lead researcher Jess Morgan said the mating of the local Australian black-tip shark with its global counterpart, the common black-tip, was an unprecedented discovery with implications for the entire shark world.

"It's very surprising because no one's ever seen shark hybrids before, this is not a common occurrence by any stretch of the imagination," Morgan, from the University of Queensland, told.

"This is evolution in action."

The discovery was made during cataloguing work off Australia's east coast when Morgan said genetic findings showed certain sharks to be one species when physically they looked to be another.

Japan developing cyber weapon: report

TOKYO: Japan has been developing a virus that could track down the source of a cyber attack and neutralise its programme, the daily Yomiuri Shimbun reported Sunday.

The weapon is the culmination of a 179 million yen ($2.3 million) three-year project entrusted by the government to technology maker Fujitsu Ltd to develop a virus and equipment to monitor and analyse attacks, the daily said.

The United States and China are reported to have put so-called cyber weapons into practical use, Yomiuri said.

Japan will have to make legal amendments to use a cyber weapon as it could violate the country's law against the manufacture of a computer virus, the daily said.

In November a computer system run by about 200 Japanese local governments was struck.

In October, Japan's parliament came under cyber attack, apparently from the same emails linked to a China-based server that have already hit several lawmakers' computers.

It was also reported that Japanese computers at embassies and consulates in nine countries were infected with viruses in the summer.

Currently, the virus is being tested in a "closed environment" to examine its applicable patterns. (AFP)

Monday, 2 January 2012

Gunman sought after ranger killed in US park

SEATTLE: A popular US national park will remain closed Monday as police hunt a gunman who shot and killed a federal ranger before fleeing into the forest, authorities said late Sunday.

A major manhunt launched immediately after the New Year's Day shooting in Mount Rainier National Park failed to find the suspect by nightfall, which hampered efforts to track him amid sub-zero temperatures.

Local media named the suspect as Benjamin Colton Barnes, 24, who allegedly killed 34-year-old park ranger Margaret Anderson after she set up a roadblock to corral the suspect who had sped away from an earlier traffic stop.

Barnes is reported to be a former soldier with previous run-ins with the law. He allegedly shot Anderson with a high-powered assault rifle before fleeing into the wilderness on foot at around 11:00 am local time.

Japan developing cyber weapon: report

TOKYO: Japan has been developing a virus that could track down the source of a cyber attack and neutralise its programme, the daily Yomiuri Shimbun reported Sunday.

The weapon is the culmination of a 179 million yen ($2.3 million) three-year project entrusted by the government to technology maker Fujitsu Ltd to develop a virus and equipment to monitor and analyse attacks, the daily said.

The United States and China are reported to have put so-called cyber weapons into practical use, Yomiuri said.

Japan will have to make legal amendments to use a cyber weapon as it could violate the country's law against the manufacture of a computer virus, the daily said.

In November a computer system run by about 200 Japanese local governments was struck.

In October, Japan's parliament came under cyber attack, apparently from the same emails linked to a China-based server that have already hit several lawmakers' computers.

It was also reported that Japanese computers at embassies and consulates in nine countries were infected with viruses in the summer.

Currently, the virus is being tested in a "closed environment" to examine its applicable patterns. (AFP)

وزیر اعظم کے دعوے اور ملک کی بگڑتی صورت حال

وزیر اعظم سید یوسف رضا گیلانی نے دعویٰ کیا ہے کہ ملک میں سب سے زیادہ ترقیاتی کام ان کے دور میں ہورہا ہے۔وزیراعظم کے بقول انہوں نے پورے ملک میں ترقیاتی منصوبوں کا جال بچھا دیا ہے ۔ اپنی اس بے مثال کارکردگی کی بنیاد پر انہوں نے اس عزم کا اظہار بھی کیا ہے کہ وہ سیاسی یتیموں اور ٹسٹ ٹیوب بے بیز کے شور شرابے پر ایوان اقتدار سے رخصت نہیں ہوں گے۔ یہ باتیں انہوں نے ہفتے کے روز ملتان میں مختلف اجتماعات سے خطاب کرتے ہوئے کیں۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ وزیر اعظم کے ان دعووں کے برعکس ملک کی حقیقی صورت حال بے حد پریشان کن ہے۔ کرپشن، مہنگائی، بے روزگاری اور بجلی کے بحران تو الگ رہے، اب تو کروڑوں گھروں کے چولہے بھی ٹھنڈے ہورہے ہیں کیونکہ کم و بیش پچھلے پچاس سال سے انہیں گرم رکھنے والا ایندھن یعنی گیس نہیں مل رہی ہے۔ پنجاب اور سرحد کے بعد اب سندھ اور بلوچستان بھی گیس کی کمیابی کا شکار ہو چکے ہیں اورکراچی کے کچھ علاقوں میں بھی دن کے بعض اوقات میں گیس کا پریشر اتنا کم ہوتا ہے کہ چولہے پر کچھ پکایا نہیں جاسکتا ۔ حقیقت یہ ہے کہ بجلی کے سالوں پرانے بحران کے بعد بعد گیس کی عدم دستیابی نے صنعتوں کو مکمل تباہی کے دہانے پر لا کھڑا کیا ہے اور قومی معیشت کی نبضیں ڈوب رہی ہیں۔ عوام کے زخموں پر مزید نمک پاشی بجلی، گیس ، سی این جی ، ایل پی جی اور پٹرول وغیرہ کی قیمتوں میں مسلسل اضافے کی صورت میں کی جارہی ہے۔ گیس کی قیمتیں بعض شعبوں کے لئے دو سو فی صد تک بڑھا دی گئی ہیں۔جس کے نتیجے میں شدید احتجاج کا سلسلہ جاری ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ جس دن وزیر اعظم نے اپنی کارکردگی کے دعوے کئے ملک بھر میں گیس کی قلت اور پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں مزید اضافے کے خلاف ہڑتالوں اور احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ جاری رہا۔کراچی سمیت سندھ کے مختلف شہروں میں سی این جی اسٹیشن اور پٹرول پمپ بند رہے۔کراچی میں سی این جی کی بندش کے خلاف پبلک ٹرانسپورٹ نے ہڑتال کی اور شہریوں کو سخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑا جبکہ پنجاب میں اتوار کے روزتمام سی این جی اسٹیشن اور پٹرول پمپ بند رکھے جانے کا اعلان سامنے آیا۔ پورے ملک میں یہ حشر برپا ہونے کے تناظرمیں وزیر اعظم کی جانب سے اپنی حکومت کی شاندار کارکردگی کے دعوے قطعی ناقابل فہم ہیں۔ ہوشمندی کا تقاضایہ ہے کہ وہ گیس کے بحران کے نتیجے میں ملک کی مسلسل بگڑتی صورت حال کو بہتر بنانے، عوام کے لئے زندگی مشکل ہوتے چلے جانے کے عمل کو روکنے اور صنعتوں اور پوری معیشت کو تیزرفتار تباہی سے بچانے کے لئے جنگی بنیادوں پر کام کریں۔ پاکستانی شہریوں کی روز مرہ زندگی اور قومی معیشت میں قدرتی گیس کی اہمیت کوئی ڈھکی چھپی بات نہیں ۔ گھروں کے چولہے روشن اور مشینوں کا پہیہ رواں رکھنے کا تمام تر انحصار کئی عشروں سے قدرتی گیس ہی پررہا ہے۔ پچھلے کم و بیش بیس پچیس برسوں کے دوران پبلک اور پرائیویٹ ٹرانسپورٹ کا بڑا حصہ بھی ایل پی جی اور پھر سی این جی کی شکل میں گیس پر منتقل ہوگیا۔ یہ سب حکومتی کی پالیسیوں اور بالواسطہ حوصلہ افزائی ہی کی وجہ سے ہوا۔ موجودہ حکومت نے دوسرے معاملات کی طرح اس معاملے میں بھی سوچ بچار سے عاری پالیسیوں کا سلسلہ جاری رکھا۔نئے نئے سی این جی اسٹیشن کھلتے رہے ، سی این جی سے چلنے والی گاڑیاں مقامی کارخانوں میں بنتی رہیں ، نتیجہ یہ کہ پوری دنیا میں کسی اور ملک میں اتنی بڑی تعداد میں پرائیوٹ گاڑیاں گیس سے نہیں چل ر ہیں۔ بجلی کا بحران گیس جنریٹروں کی مقبولیت کا باعث بنا کیونکہ پٹرول گیس کے مقابلے میں مہنگا تھا۔ کارخانوں میں بجلی کی طرح گیس چوری کا سلسلہ بھی پوری ڈھٹائی سے جاری رہا جس کا بنیادی سبب ملک میں اوپر سے نیچے تک پھیلا ہوا کرپشن کا مرض ہے اور موجودہ دور حکومت میں توکرپشن کے تمام سابقہ ریکارڈ ٹوٹ گئے ہیں۔ ہونا تو یہ چاہیے تھا کہ چار سال پہلے جب وزیر اعظم گیلانی کی قیادت میں موجودہ ٹیم نے حکومت سنبھالی تھی تو فوری طور پر جائزہ لیا جاتا کہ قدرتی گیس اور سی این جی کے ذخائر کی کیا صورتحال ہے، یہ ذخیرہ کب تک ملکی ضرورت کا ساتھ دے سکتا ہے اوراس کے ختم ہونے سے پہلے کیا بندوبست کیا جانا ضروری ہے۔ لیکن اس کی کوئی فکر نہیں کی گئی۔ صرف باتیں ہوتی رہیں کہ ایران سے گیس پائپ لائن بچھائی جائے گی یا ترکمانستان سے گیس لی جائے گی۔ کبھی امریکہ کو ایران سے گیس کے حصول میں رکاوٹ قرار دیا جاتا رہا اور کبھی اس کی ڈکٹیشن کی پروا نہ کرنے کے اعلانات ہوتے رہے۔ یہ خوش خبریاں بھی ملتی رہیں کہ ملک کے اندر قدرتی گیس کے اتنے وسع ذخائر دریافت کرلئے گئے ہیں جو مزید پچاس سال کیلئے کافی ہوسکتے ہیں۔ مگر عملی طور پر نتیجہ صفر ہی رہا حتیٰ کہ نوبت یہاں تک آپہنچی کہ اب گھروں ، کارخانوں اور ٹرانسپورٹ سمیت پورا نظام بیک وقت زمیں بوس ہوتا دکھائی دے رہا ہے۔ ان حالات میں ہم وزیر اعظم کو یہی مشورہ دے سکتے ہیں کہ وہ اقتدار سے نہ جانے کے غیرضروری دعوے کرنے کے بجائے ملک کو درپیش سنگین مسائل حل کرنے پر توجہ دیں جن میں اس وقت گیس کا بحران سرفہرست ہے۔ کیونکہ ملک کا ہر شہری اس سے براہ راست متاثر ہورہا ہے۔ ٹی وی چینلوں پر یہ مناظر عام دکھائے جارہے ہیں کہ گھروں میں چولہے ٹھنڈے ہونے کی وجہ سے بچے صبح ناشتہ کیے بغیر اسکول جاتے ہیں ۔ یا آدھی رات کے بعد کچھ دیر کے لئے گیس آتی ہے تو بچے کھانا پکنے کا انتظار کرکے سوچکے ہوتے ہیں۔گیس کی تقسیم کے نظام کو ٹھیک کرنے، اس سلسلے میں درست ترجیحات متعین کرنے، گیس کی چوری کا سلسلہ روکنے اور دوسرے ضروری اقدامات کرنے میں اب مزید کوتاہی کی گئی تو اس سے عام آدمی کی مشکلات اور پریشانی میں مزید اضافہ ہوجائے گااور حکومت کی کارکردگی جو پہلے بھی تسلی بخش نہیں ہے مزید خراب ہوجائے گی اور اس کی تلافی حکمرانوں کے زبانی دعووں سے نہیں ہوسکے گی۔

بلوچستان میں دہشت گردی کی واردات
کوئٹہ میں دہشت گردی و تخریب کاری کی ایک تازہ واردات میں سابق وزیر میر نصیراللہ مینگل کے صاحبزادے کے گھر کے قریب دھماکہ خیز مواد سے بھری ہوئی گاڑی کے دھماکے سے 15 افراد ہلاک اور 30 زخمی ہوگئے۔ اس دھماکے سے مرنے والوں میں بچے بھی شامل ہیں۔ بلوچستان میں قتل و غارت تسلسل سے ہورہی ہے۔ تازہ کار بم دھماکے کی ابتدائی تحقیقات سے جو اندازے لگائے گئے ہیں ان کے مطابق یہ واردات کسی تنظیم کی کارروائی بھی ہوسکتی ہے لیکن واردات کرنے والوں کے مقاصد اور عزائم کا ابھی تک کوئی اندازہ نہیں ہوسکا ہے۔ بلوچستان میں تشدد‘ تخریب کاری اور دہشت گردی کی مسلسل وارداتوں سے اس بات کا عندیہ ضرور مل رہا ہے کہ وہاں بدامنی تیزی سے بڑھ رہی ہے جس سے کوئی بھی محفوظ نہیں۔ اس صورتحال میں سب سے زیادہ تشویش کی بات یہ ہے کہ صوبے میں تیزی سے بڑھتی ہوئی تشدد اور بدامنی کی وارداتوں پر قابو پانے میں صوبائی اور وفاقی حکومت دونوں بے بس نظر آتی ہیں اور انہوں نے اب تک کوئی ایسی حکمت عملی نہیں بنائی ہے جسے دیکھتے ہوئے توقع کی جاسکتی ہو کہ حکومت صوبے میں تشدد اور خون ریزی کی ان وارداتوں پر قابو پانے میں کامیاب ہوجائے گی۔ لیکن بلوچستان کے باشندوں کو حالات کے رحم و کرم پر چھوڑ دینا بھی مسئلے کا حل نہیں۔ بلوچستان کو بدامنی کی اس دلدل سے نکالنے کیلئے حکومت کو اپنی حکمت عملی موٴثر بنانی چاہئے اور کوشش کرنی چاہئے کہ صوبے کے عوام کی جائز شکایات کا تفصیلی جائزہ لیتے ہوئے کوئی ایسا راستہ نکالا جائے جس کے ذریعے بلوچستان کے باشندوں کے گلے شکوے دور کئے جاسکیں اور ان کے احساس محرومی کا مستقل بنیادوں پر مداوا کیا جاسکے۔

دودھ کی قیمتوں کا مسئلہ
ہفتے کے روز کمشنر کراچی کی ہدایت پر شہر میں دودھ کی خوردہ قیمت 60 روپے فی کلو مقرر کرنے کا اعلان سامنے آیا ہے۔ دودھ کی قیمتوں کے حوالے سے ایک عرصے سے یہ عجیب و غریب صورتحال دیکھنے میں آ رہی ہے کہ حکومت دودھ کی قیمت کچھ مقرر کرتی ہے اور دودھ فروش کسی اور قیمت پر دودھ فروخت کرتے ہیں۔ اس وقت بھی صورتحال یہ ہے کہ پچھلے کئی ہفتوں سے شہر میں دودھ 70 روپے فی لیٹر فروخت کیا جا رہا ہے۔ نا معلوم وجوہات کی بنا پر حکومت اتنی مدت کے بعد اچانک دودھ کی فی لیٹر قیمت 60 روپے مقرر کر رہی ہے۔ کراچی کے شہریوں کے لیے یہ بڑی تکلیف دہ صورتحال ہے۔ کیونکہ سرکاری قیمت کے اعلان کے بعد انہیں عملاً اس قیمت پر پورے شہر میں کہیں دودھ دستیاب نہیں ہو گا۔ حکومت کو چاہیے کہ دودھ جیسی روزمرہ ضرورت کی چیزوں کے نرخ مقرر کرتے وقت اس بات کا خاص خیال رکھے کہ یہ چیز مقررہ نرخوں پر شہر میں دستیاب بھی ہو۔ محض اعلان کر دینے سے ایسے احکامات کا عام آدمی کو کوئی فائدہ نہیں پہنچتا اور حکومت کی سبکی الگ ہوتی ہے۔
 

اپنا ہنر بیچتا ہوں...سحر ہونے تک…ڈاکٹر عبدالقدیرخان

برصغیر کے مشہور اِنقلابی شاعر نواب شبّیر حسن خان جوش# کا مشہور شعر ہے۔
”نہ ہوگا کوئی مجھ سا بھی تیرہ قسمت“
میں کمبخت اَپنا ہنر بیچتا ہوں
حالانکہ اُنھوں نے کبھی اپنے ہنر یعنی علم و ادب کو بیچنے کی غلطی نہیں کی بلکہ انگریز کے دور میں ایک پُر جوش اِنقلابی نظم لکھ کر ہندوستان کی زبوں حالی بیان کرتے ہوئے پرٹش انڈیا کی تباہی کے لئے ہٹلر سے یوں استدعا کی:
بکنگھم کی خبر لینے جو اب کی بار تو جانا
ہمارے نام سے بھی ایک گولہ پھینکتے آنا
اس کے ساتھ ہی انھوں نے ہندوستانیوں کی حالت زار بھی یوں بیان کی:
سنا تو ہوگا تو نے ایک انسانوں کی بستی ہے
جہاں جیتی ہوئی ہر چیز جینے کو ترستی ہے
اس نظم کے لکھنے پر انھیں سزا بھگتنے کی طویل داستاں ہے۔
جوش# نے اپنا ہنر (ضمیر نہیں) بیچنے کی بات شاید اس لئے محسوس کی ہوگی کہ فلم ڈائرکٹر ڈبلیو زیڈ احمد کے اصرار پر انھوں نے فلم ”ایک رات“ کے گانے لکھنے پر آمادگی ظاہر کردی اور ان کے تحریر کردہ گانے بیحد مقبول ہوئے۔ ایک گیت تو آجتک لوگوں کو یاد ہے۔
”دنیا یہی دنیا ہے تو کیا یاد رہے گی“
انھیں لیکن یہ فلمی گیت لکھنے کا ہمیشہ ہمیشہ قلق رہا اور اسی لئے انھوں نے ہنر بیچنے کی بات کی۔ چیزیں خریدی اور بیچی جاتی ہیں اسی لئے بیچنے والے کے نام سے اس کا پیشہ جُڑ جاتا ہے جیسے سبزی فروش، گندم فروش، موتی والا، وغیرہ وغیرہ۔ لیکن ہمارے ملک میں ایک اور نہایت مکروہ اور قابل ہتک نام بھی ہے اور وہ ہے ”وطن فروش“ جسے عرف عام میں غدّار کہتے ہیں۔ بلکہ یہ نام یا لقب غدّار سے بھی زیادہ قابل نفرت ہے کیونکہ غدّار تو ایک گروپ، فرقہ یا چند لوگوں سے بے وفائی کرتا ہے لیکن وطن فروش تو اپنے ہم وطنوں کی عزّت، غیرت، حمیت، جان و مال کا سودا کردیتا ہے۔ تاریخ میں ایسے وطن فروشوں کی لاتعداد کہانیاں ہیں جن کی وجہ سے نسلیں تا قیامت اُن پر لعنت بھیجتی رہینگی۔ سب سے مشہور مثال ایسے غدّاروں کی ہمارے سامنے بنگال کے میر جعفر اور دکن کے میر صادق کی ہے۔ جن کا ذکر علامہ اقبال  نے بھی اپنے کلام میں یوں کیا ہے:
جعفر از بنگال و صادق از دکن
ننگ ملت، ننک دیں، ننگ وطن
میر جعفر نے اگر نواب سراج الدولہ کے ساتھ غدّاری نہ کی ہوتی تو ہماری تاریخ مختلف ہوتی اور تمام انگریز وہیں نیست و نابود کردیے جاتے۔ غدّاری کے نتیجہ میں نوابی کی جگہ انگریزی تسلط قائم ہوا اور وہاں سے اُنھوں نے سازشوں کا جال پھیلا کر آہستہ آہستہ اپنا مقبوضہ علاقہ بڑھاتے رہے۔ اسی طرح میر صادق نے ٹیپو سلطان کے ساتھ غدّاری کی اور جنوبی ہند پر انگریزوں کا راج قائم ہوگیا۔ آہستہ آہستہ سازشیں کرکے انھوں نے نظام اور مرہٹوں کو شکست دیکر اپنا تابعدار بنالیا۔ یہی وجہ ہے کہ علامہ اقبال نے ایسے غدّاروں کیلئے ننگ ملت، ننگ دیں، ننگ وطن کے الفاظ استعمال کئے یعنی ایسے وطن فروش لوگ مذہب و ملت اور وطن کیلئے باعث شرم ہیں۔ غدّاری کرنے والے اپنے مالک سے بے وفائی کرکے ذاتی مفاد حاصل کرنا چاہتے ہیں جب کہ وفا و غیرت جیسی خوبی کو ترک کردیتے ہیں۔ غالب# نے کیا خوب کہا ہے:۔
وفاداری بشرط استواری اصل ایماں ہے
مَرے بت خانہ میں تو کعبہ میں گاڑو برہمن کو
یعنی اگر برہمن وفاداری میں مُسلَّم ہو تو اس قابل ہے کہ اس کی عظمت کی جائے کیونکہ وفاداری اگرپختہ ہو تو ایمان کی اصلیت ہے لیکن اسے مضبوط ہونا چاہئے ۔ جب وفاداری اتنی قابل قدر چیز ہے تو بے وفائی کتنی قابل نفرت اور مکروہ عمل ہے۔ غدّاری تو بے وفائی کی انتہائی خراب شکل ہے کیونکہ نفرت کے ساتھ اس میں بدعملی بھی شامل ہو جاتی ہے۔ بڑی بڑی حکومتیں اسی غدّاری کے سبب فنا ہوگئیں۔ ہندی میں ایک کہاوت ہے: ”گھر کا بھیدی لنکا ڈھائے“۔ یہ اس لئے محاورہ بنا کہ لنکا کے راجہ راون کے بھائی نے راون کا ساتھ چھوڑ کر رام چندرجی کے پاس جاکر تمام راز بتلادیے جو راون کی شکست کا سبب بن گئے۔
ہمارے ملک میں بھی وطن فروشوں اور غدّاروں کی طویل فہرست ہے جنھوں نے اپنے ذاتی مفاد کی خاطر ملک کے خیر خواہوں کو سخت نقصان پہنچایا۔ انھیں جیلوں میں ڈالا اور ماورائے قانون قتل بھی کروایا۔ یہ غدّار تو بظاہر کسی فرد واحد حکمراں کے مخالف تھے اور اس کی ذات کو نقصان پہنچانے کے درپے تھے حالانکہ پوری قوم نے اسکا خمیازہ بھُگتا۔ یعنی ایک ضمیر فروش و غدّار مسعود محمود کے عمل سے جناب بھٹو ایک جھوٹے مقدمہ میں پھانسی پر لٹکا دیئے گئے۔ غدّار کو تو مالی فائدہ ہوگیا مگر پوری قوم کو اور ملک کو ناقابل تلافی نقصان پہونچا۔ ملک کے آگے بڑھتے قدم نہ صرف رُک گئے بلکہ پیچھے کی جانب چلنے لگے۔ دوسری بُرائی یہ پیدا ہوئی کہ دوسرے لوگوں کو بھی غدّاری کرکے ذاتی مفاد حاصل کرنے کا حوصلہ ہوگیا۔ یہ ایوب خان کے زمانہ سے، بلکہ غلام محمد کے زمانہ سے ہی شروع ہوگئی تھی اور جنرل ضیاء الحق اور مشرف کے دور میں انتہا کو پہنچ گئی۔ ضیاء الحق کے دور میں مذہبی انتہا پسندی اور منشیات کی اسمگلنگ کو فروغ ہوا، جمہوریت کو قتل اور دفن کردیا گیا اور بیرونی مداخلت براہ راست یا بالواسطہ شروع ہوئی۔ ملکی مفاد پرستوں نے زیادہ سے زیادہ دولت حاصل کرنا اپنا مقصد بنا لیا۔ مشرف کا دور آیا تو سیاسی لوگ اور بیورو کریٹس حکومت کے ہم نوا بن کر اقتدار اور دولت دونوں حاصل کرنے کی بھاگ دوڑ میں لگ گئے۔ جس کی جیتی جاگتی مثال ایک صاحب ہیں جنھوں نے بھٹو صاحب کی پھانسی کے دن ہمارے سامنے مٹھائی بانٹی اور آج ان سے بڑا مخالفین کو لعن طعن کرنے والا ملک میں نہیں ۔
اور اپنے پچھلے کارناموں پر رتی برابر پشیمانی نہیں۔
پرویز مشرف کے آرمی چیف بننے اور حکومت پر قبضہ کرنے سے پیشتر ہی فوج کو اور عوام کو اس کے کردار کے بارہ میں تمام باتوں کا علم تھا۔ جوں ہی اس نے حکومت پر ناجائز قبضہ کیا تو اپنے ساتھ لٹیروں کا ایک گروہ ساتھ میں ملا لیا۔ ملک کی عزّت و وقار کو چند ٹکوں میں بیچ دیا، ہمیں امریکی کالونی بنادیا، اپنے ہی ہزاروں شہریوں کو قتل کردیا اور دوسروں سے کرایا۔ اپنے لوگ بیچ کر اس بارہ میں اپنی کتاب میں فخریہ اس کی رقم وصول کرنے کا ذکر کیا۔ عورتیں، بچّے، علماء، بزرگ سیاستداں نواب اکبر بگتی وغیرہ کو شہید کیا۔ چوروں لٹیروں کے اربوں روپے کے قرضے معاف کردیئے۔ ایک وقت تھا جب ہمارے یہاں سرفروشوں کی عزّت کی جاتی تھی مگر اب ہم ضمیر فروشوں ، غدّاروں اور منافقوں کو ہیرو بنائے پھرتے ہیں ۔ اب وطن فروشوں نے ملک کے اندر ایسی پالیسیاں اختیار کرلی ہیں کہ بجائے جنگ کے ہم اقتصادی ، مالی اوراخلاقی طور پر ختم ہو کر پرانے غدّاروں کی فہرست میں شامل ہوجائیں گے۔ روس کی مثال ہمارے سامنے ہے۔ گورباچوف کی پالیسیوں پر یہاں بھی تیزی سے عمل ہو رہا ہے۔
(نوٹ) پچھلے کالم میں اپنے عزیز دوستوں کے نام لکھنا بھول گیا تھا۔ جناب ریاض محمد خان، عزیز احمد خان، انور کمال صاحب اور ڈاکٹر افضل اکبر خان تشریف لائے تھے بے حد شکر گزار ہوں۔ کے آرایل کے ڈاکٹر نور الاسلام خان نورو فزیاتھراپسٹ نے جلد صحتیابی میں مدد کی ان کا بھی بے حد شکر گزار ہوں۔

پاکستان ریلوے تباہی کے دہانے پر؟

ویسے توملک کا ہر ادارہ روبہ زوال ہے لیکن آج کل ریلوے کے محکمہ کی نااہلی، بد انتظامی اور بے حسی نے مسافروں اور ان کے عزیز و اقارب کو سخت اذیت اور ذہنی کوفت میں مبتلا کیا ہوا ہے، ریل گاڑیاں گھنٹوں تاخیر کا شکار ہیں اور مسافر ٹکٹیں لے کر بھی خوار ہورہے ہیں۔ سخت گرمی اور انتظار میں خواتین اور بچوں کا برا حال ہوگیا ہے۔ اسٹیشن پرمسافروں کے بیٹھنے کا کوئی مناسب انتظام بھی نہیں ہے اور ریلوے کا محکمہ یہ بتانے سے بھی قاصر ہے کہ ٹرین کب روانہ ہو گی یا آنے والی گاڑی کب تک اسٹیشن پر پہنچے گی۔ ریلوے اس حال کو ایک دن میں نہیں پہنچی بلکہ ہر دور میں نہایت دل جمعی کے ساتھ اس ادارے میں منظم لوٹ مار اور کرپشن کا سلسلہ جاری رہا۔ سیاسی بنیادوں اور سفارش پر بھرتی ہونے والے نااہل اور کرپٹ افسران نے ریلوے کا بیڑہ غرق کر دیا ہے۔ ریلوے کے کسی بھی معاملے کا جائزہ لیا جائے تو کرپشن کی ہوش ربا داستانیں منظر عام پر آتی ہیں۔ انجنوں کی خریداری، بوگیوں کی مرمت، ریل کی پٹریاں، سامان کی لوڈنگ، ٹکٹوں کی بکنگ، پلیٹ فارم کے معاملات، ایندھن کی خریداری، آلات کی مرمت، ریلوے کی قیمتی زمینیں، غرض کہ جس معاملے کو بھی دیکھا جائے بد عنوانیوں کے دفتر کھل جاتے ہیں۔
ادارہ اب تباہی کے دہانے پر پہنچا ہوا ہے۔ کئی روٹ پر چلنے والی گاڑیاں پہلے ہی بند ہو چکی ہیں اور اب ادارے کے پاس ایندھن خریدنے کے بھی پیسے نہیں بچے۔ حکومت کی عارضی مدد سے کچھ دن کا انتظام تو ہو گیا ہے لیکن اصل سوال تو اب بھی موجود ہے کہ اس ادارے کا مستقبل کیا ہے؟ کیا یہ ادارہ اپنا وجود برقرار رکھ پائے گا یا دیوالیہ ہو کر بند ہو جائے گا؟ اس کے بند ہونے سے چھوٹے شہروں اور قصبوں سے باقی ملک کا رابطہ کیسے برقرار رہے گا؟ ملک کے دفاعی معاملات میں بھی ریلوے کا ایک کردار ہے اس کا کیا ہو گا؟ قابل بھروسہ متبادل انتظام کیا ہے؟ چھوٹے بڑے شہروں میں سڑکوں اور شاہراہوں کا نظام قابل رشک نہیں ہے۔ افراد و سامان کی نقل و حمل کا یہ ادارہ اگر تباہ ہو گیا تو ملک کے اسٹراٹیجک مفادات کو سخت نقصان ہو گا۔ ریلوے کا ادارہ حکومت کی فوری اور موثر توجہ چاہتا ہے۔

بون کانفرنس۔۔ ۔۔ اب کیا ہوگا؟

جرمنی کے شہر بون میں ہونے والی کانفرنس پاکستان کی عدم شرکت کے باعث ناکام نہ سہی تو غیر مئوثر ضرور کہلائی جائے گی کیونکہ افغانستان میں قیام امن کے لئے جس سیاسی مصالحت کی ضرورت امریکہ اور اس کے اتحادیوں کو درکار ہے اس سیاسی مصالحت کی جانب پیش رفت صرف پاکستان کی مدد سے ہی ممکن ہے ۔ امریکہ پاکستان کی مدد تو چاہتا ہے لیکن اس کے تحفظات اور ضروریات پر بھارت سے اپنے تعاون اور اسٹرٹیجک پارٹنر شپ کو فوقیت دینے پر بضد ہے اور شاید یہی وہ وجہ ہے جس نے پاکستان کو مجبور کردیا سخت رویہ اپنانے پر حالانکہ گذشتہ دس برسوں میں پاکستان نے امریکہ کے ساتھ آنکھ بند کرکے اپنے مفاد کے خلاف ہر ممکن تعاون کیا لیکن اس کے باوجود بھارت کے مقابلے پر امریکہ کا اعتماد حاصل نہ کر سکا۔۔۔۔ بون کانفرنس تو شروع ہو کر ختم بھی ہو گئی لیکن دلچسپ بات یہ ہے کہ کانفرنس کے اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ2014ء میں بین الاقوامی فوج کے انخلا کے بعد بھی کم سے کم ایک دہائی تک افغانستان کو عالمی برادری کی مدد درکار ہوگی جو جاری رکھی جائے گی۔ لیکن بین الاقوامی فوج کا انخلا ممکن کیسے ہو گا، یہ نکتہ اعلامیہ میں تو شامل نہیں۔۔۔لیکن اگلے دو سالوں کی حکمت عملی یقیناً طے کرلی گئی ہو گی اور یہ حکمت عملی پاکستان کے علم میں بھی ہو گی اور اس کے مفادات کے یکسر خلاف ہو گی یہی وجہ ہے کہ پاکستان نے بون کانفرنس کا بائیکاٹ کیا۔ اب پاکستان بون کانفرنس کے فیصلوں پر عمل درآمد کا اخلاقی طور پر پابند تو نہیں لیکن اس سے مسائل تو بہرحال حل نہیں ہونگے۔دنیا کا دباؤ اب بھی پاکستان پر ہی ہو گا ۔۔۔۔ افغانستان کے حوالے سے فیصلہ کن پالیسی اختیار کرنے کا وقت اب سر پر آ پہنچا ہے ۔۔۔۔دیکھو اور انتظار کرو کا وقت بھی ختم ہو رہا ہے۔۔۔۔ بون کانفرنس کے بعد اب کیا ہونے والا ہے؟ اب امریکہ اور مغربی ممالک کا پاکستان کے ساتھ کیا رویہ ہو گا؟ کیا دنیا پاکستان کی بات مانے گی یا پاکستان سے اپنی بات منوائے گی؟ پاکستان کو اپنے مفادات ، خطے کے مفادات، دوستوں کے مفادات اور مستقبل کے اندیشوں اور خطرات کا ادراک بہترین طریقے سے کرتے ہوئے ان تمام پر خطر راستوں سے بڑی مہارت سے گزرنا ہو گا۔۔۔ لیکن یہ سوال بھی بڑا اہم ہے کہ تاریخ کے اس اہم موڑ پر ہم بحیثیت قوم اس اہم ترین مرحلے کو کامیابی سے عبور کرنے کیلئے تیار بھی ہیں یا حسب دستور انتشار کا شکار ہیں۔۔۔۔!!
اب ہمیں کیا کرنا ہے ۔۔۔۔آپ بھی اپنی رائے سے آگاہ کریں۔

انصاف کی منتظر حوا کی بیٹی!!!

سینٹ نے خواتین پر تیزاب پھینکنے اور جبری شادیوں کی روک تھام کے دو بل متفقہ طور پر پاس کئے ہیں جس کے تحت کسی خاتون پر تیزاب پھینکنے کی سزا عمر قید اور 10لاکھ روپے جرمانہ ہوگی جبکہ جبری شادی کی سزا 3سے 10سال قید اور 10 لاکھ جرمانہ قرار پائے گی۔یہ بل سینٹ میں پاکستان مسلم لیگ کی سینیٹر نیلوفر بختیار نے پیش کیا، تمام سیاسی جماعتوں کے ارکان نے اس بل کی تائید کی اور رائے شماری کے بعد اسے متفقہ طور پر منظور کر لیا۔اس بل کے تحت خاتون پر تیزاب پھینکنے پر عمر قید اور کم از کم 10 لاکھ روپے جرمانہ ہو گا۔سینیٹ میں خواتین کی جبری شادیوں کو روکنے کے لیے بھی فوجداری قانون میں ترمیم کا بل 2011 پیش کیا گیا اور اس بل کی بھی متفقہ طور پر منظوری دے دی گئی۔اس بل کے تحت کسی عورت کو ونی یا سوارہ کرنے پر کم از کم تین سال اور زیادہ سے زیادہ10 سال قید اور پچاس ہزار روپے جرمانہ ہوگا۔ واضح رہے کہ قومی اسمبلی پہلے ہی ان بلوں کی منظوری دے چکی ہے اور صدرمملکت سے منظوری لینے کے بعد یہ پل باقاعدہ قانون کی شکل اختیار کر جائیں گے۔ اس بل کی سینٹ اور قومی اسمبلی سے باقاعدہ منظوری کے بعد ذہن میں یہ سوالات جنم لیتے ہیں کہ کیا ان بلوں کو قانونی شکل مل جانے کے بعد مستقبل میں ایسے واقعات کی روک تھام ممکن ہوپائے گی؟ کیا اس سوال کا جواب کسی کرتا دھرتا کے پاس ہے کہ ماضی میں جن خواتین کے ساتھ یہ اندوہناک سانحہ وقوع پذیر ہوچکا ہے انہیں بھی انصاف ملے اورظالموں کو کیفر کردار تک پہنچانے کے لئے بھی اس بل میں کوئی شق رکھی گئی ہے؟ظلم کی شکار خواتین آواز تو اٹھا چکی ہیں تاہم انصاف کے دروازے ابھی تک ان کے لئے وا نہیں ہوپائے۔ایسی خواتین کو میڈیا کے ذریعے اکثر و بیشتر منظر عام پر لاکر قانون کے رکھوالوں کے ذہن پر دستک تو ضرور دی جاتی ہے مگر اس کا اثر کیا اور کس حد تک ہوتا ہے یہ عوام بہتر طور پر جانتی ہے۔پاکستان جیسے ترقی پذیر ملک میں خواتین پر تیزاب پھینکنے کے واقعات یا ان کو روایات کے نام پر ونی کردینے کی رسم بہت پرانی ہے اور میڈیا کے فروغ کے بعد اس کو منظر عام پر آئے بھی کئی برس بیت چکے ہیں مگر پھر بھی اس طرح کے کسی بل کی سینیٹ یا قومی اسمبلی میں منظوری 2011 میں کہیں جاکے عمل میں آئی ہے ایسے میں عوام بس امید ہی کرسکتے ہیں کہ صدر مملکت جلد ازجلد اس بل کی منظوری دے کر آنے والی نسلوں کو اس قبیح اور بھیانک جرم سے محفوظ رکھ سکیں اور حوا کی بیٹی کی زندگی بھی برباد ہونے سے بچ جائے۔یہاں سینٹ اور قومی اسمبلی جس کو کہ عوام کی رائے اور مسائل کو مدنظر رکھتے ہوئے تشکیل دیا گیا،اس سے یہ بھی گزارش کی جانی چاہئے کہ کوئی ایسا قانون یا بل بھی پاس کیا جائے جس سے ماضی میں ایسے واقعات کا شکار بدنصیب خواتین کو انصاف کے لئے عدالت کی چوکھٹ پے بیٹھ کر اپنی باقی ماندہ زندگی برباد نہ کرنی پڑے بلکہ ان کو بھی فوری اور آسان انصاف مہیا کیا جائے اور یہ ہی نہیں ایسی خواتین کو حکومت کی جانب سے مفت علاج معالجے کی سہولت بھی فراہم کی جائے تاکہ ان کی زندگی بھی آس و نراس کے جنگل سے نکل کر خوشیوں اور کامیابیوں کا گلشن بن سکے۔

ماضی میں ونی یا تیزاب پھینک کر چہرہ خراب کردی جانے والی خواتین کا بھی کوئی پرسان حال ہونا چاہئے؟

پاک بھارت تعلقات اور امریکی رویہ!!

پاکستان اور بھارت کے درمیان تعلقات کی بحالی کے لئے مذاکرات کا ایک دور حال ہی میں اسلام آباد میں ختم ہواجس میں دونوں ملکوں کے درمیان س بات پر اتفاق کیا گیا ہے کہ ایٹمی حادثات سے بچاوٴ کے معاہدے کو پانچ سال کیلئے توسیع دی جائیگی اور دونوں وفود مذاکرات میں ہونیوالی پیشرفت سے خارجہ سیکرٹریوں کو آگاہ کرینگے۔ان مذاکرات میں پاکستان نے غیر ارادی طور پر یا غلطی سے سرحد عبور کر کے بھٹک جانے والے افراد کی واپسی، پاک بھارت سرحد پر توپ خانہ پیچھے ہٹانے اور فوجی مشقوں کے بارے میں قبل ازوقت ایک دوسرے کو آگاہ کرنے کے طریقہ کار کو بہتر بنانے کے حوالے سے نئی تجاویز پیش کیں۔دفتر خارجہ کے مطابق ابتداء میں دونوں ملکوں کے درمیان موجود مختلف معاہدوں پر غور کیا گیا جن میں لائن آف کنٹرول پر جنگ بندی ، دونوں ملکوں کے ڈائریکٹر جنرل ملٹری آپریشن اور کوسٹ گارڈ کے درمیان ہاٹ لائن اور فضائی حدود کی خلاف ورزیوں کے بارے میں 1991کامعاہدہ شامل ہے۔
پاکستان بھارت کو پہلے ہی تجارت کے لئے پسندیدہ ملک کا درجہ دے چکا ہے اور نجی سطح پر مختلف اشیاء کی تجارت کا آغاز بھی ہو گیا ہے۔ اگرچہ پاک بھارت مذاکرات کی رفتار بہت سست ہے لیکن حالیہ مذاکرات کا اہم پہلو یہ ہے کہ مذاکرات زیادہ تر سرحدوں اور فوجی امور سے متعلق ہوئے جن سے دونوں ممالک کے درمیان اعتماد سازی کے عمل کو تقویت ملے گی۔ اگر یہ عمل بلارکاوٹ جاری رہے تو دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کم سے کم عرصہ میں بہتر ہو سکتے ہیں۔ لیکن یہ امر بھی ایک حقیقت ہے کہ جب بھی پاک بھارت مذاکرات ہوتے ہیں تو کئی علاقائی اور بین ا لااقوامی طاقتیں ان مذاکرات پر نظریں گاڑ دیتی ہیں اور اپنے اپنے مفادات کے لحاظ سے ان مذاکرات پر اثرانداز ہونے کی کوشش کرتی ہیں۔سب جانتے ہیں کہ افغانستان سے نیٹو افواج کی واپسی، دہشت گردی کے خلاف جنگ، اور افغانستان میں تعمیر نو کے حوالے سے پاکستان اور امریکہ کے تعلقات کشیدگی کا شکار ہیں۔ پاکستان نے امریکی خواہشات کو اپنے مفادات کے بر خلاف ماننے سے انکار کردیاہے بلکہ گذشتہ ایک ماہ سے نیٹو کی رسد بھی پاکستان کے راستے سے بند ہے چنانچہ پاکستان پر دباؤ بڑھانے کے لئے امریکہ اب بھارت پر دباؤ ڈال رہا ہے کہ وہ پاکستان سے تعلقات بڑھانے میں تیز رفتاری نہ دکھائے۔ خود بھارتی وزیراعظم ہاوٴس کے ذرائع کے مطابق امریکہ نے بھارت کو مشورہ دیا ہے کہ وہ پاکستان کے ساتھ اپنے بڑھتے تعلقات کی رفتار میں کمی کردے، امریکی سفارتخانے کی جانب سے بھارتی وزیراعظم کو لکھے گئے ایک خط میں کہا گیا ہے کہپاکستان افغانستان میں امن کے قیام کی کوششوں کی راہ میں رکاوٹیں پیدا کررہا ہے جس سے نہ صرف امریکی افواج کو افغانستان میں سخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے بلکہ امریکا کی طرف سے دہشت گردی کے خلاف جاری مہم بھی سست ہوکر رہ گئی ہے۔ ان حالات میں بقول امریکہ دہشت گردوں کو اپنی کارروائیوں کو دوبارہ شروع کرنے کا موقع مل رہا ہے۔ امریکی خط میں کہا گیا ہے کہ بھارت ، معیشت کی بہتری کیلئے پاکستان کے ساتھ تجارتی روابط بڑھارہا ہے جبکہ یہ رابطے مستقبل قریب میں مشکلات کا باعث بن سکتے ہیں۔
اس امریکی خط سے جہاں امریکہ کا پاکستان سے متعلق بھارت پر دباؤ کا پتہ چلتا ہے وہیں اس خطے میں امریکی عزائم کے متعلق بھی ایک اشارہ نظر آتاہے۔ اس سے قبل امریکی وزیر خارجہ بھی اپنے دورہ بھارت کے دوران بھارت کو اس خطے میں امریکی تعاون سے قائدانہ کردار ادا کرنے کا مشورہ دے چکی ہیں یعنی دوسرے معنوں میں بھارت امریکی ڈکٹیشن پر چلے۔
کیا پاک بھارت مذاکرات سے تعلقات کی بحالی ممکن ہے یا محض وقت گزاری کا ذریعہ؟
لیا امریکہ اور مغربی ممالک کا دباؤ بھارت کو مذاکرات سے راہ فرار کا موقع دے سکتا ہے؟
کیا بھارت اس خطے میں غیر ملکی قوتوں کو دخل اندازی کا موقع فراہم کرنے میں مددگار ہوگا؟
لیا بھارت اپنے پڑوسی ملک سے تعلقات پر افغانستان میں امریکی مفادات کو ترجیح دے گا؟
افغانستان کے حوالے سے پاکستان اور بھارت میں بھی زبردست کشمکش جاری ہے، کیا اس حوالے سے دونوں ممالک امریکی مداخلت کے بغیر کسی باہمی تعاون اور سمجھوتے پر پہنچ سکتے ہیں ؟
آپ بھی اپنی رائے کا اظہار کریں۔

سال نو مبارک

سال 2011ء ماضی کی وہ یاد بن کر رہ گیا ،جس میں کہیں خوشگوار لمحوں کی پرکیف باتیں ہیں تو کہیں تلخ گھڑیوں کی
سوگوار یادیں،کہیں پیاروں کے بچھڑ جانے کا غم توکہیں نئے رابطے گہری دوستی میں بدل رہے ہیں،کوئی منزل کی جانب پیش قدمی کررہا ہے ،توکوئی نشان منزل کی دوری سے اکتا کر واپسی کے سفر پر گامز ن ہے اور کوئی اپنے ارادوں کومضبو ط کرکے بلند حوصلہ چیونٹی کی طرح دوبارہ رخت سفر باندھ رہا ہے ،یہی زندگی ہے ۔تمام پڑھنے والوں کو سال نو کی خوشیاں مبارک ہوں ، دعا ہے یہ کہ سال آپ کی زندگی میں مثبت وخوشگواورتبدیلیاں لائے اور ملک کیلئے شاہراہ کامیابی پرا یک سنگ میل ثابت ہو۔
دن کو ہفتوں اور ماہ وسال کے قالب میں ڈھلنا ہی ہوتا ہے ،یہ ازل سے چلا آرہا سلسلہ کسی فرد ،قوم اور ملک کا انتظار نہیں کرتا۔ 2011ئاب سال گزشتہ بن چکا ہے ،جو ہمیں ایک ایسی گٹھڑ ی تھما گیا ہے ،جومختلف واقعات سے بھری ہے ۔جن میں شامل دہشت گردی کی کارروائیاں ، پٹرول بجلی اورگیس کے نرخوں میں اضافے ، لوڈشیڈنگ اورمہنگائی نے شہریوں کو انتہائی پریشان رکھا ۔
اعدادوشمار کے واقعات ملک بھر میں دہشت گردی کی کم وبیش 600کارروائیاں رپورٹ ہوئیں جن میں تقریباًڈھائی ہزار پانچ سو شہری اور ساڑھے سات سو سیکیورٹی اہلکارزندگی کی بازی ہار گئے۔جبکہ امریکی اہلکارریمنڈ ڈیوس کے ہاتھوں دو شہریوں کا قتل،ایبٹ آباد میں اسامہ بن لادن کی ہلاکت، مہران بیس کراچی پر دہشت گردوں کی کارروائی اور سلالہ چیک پوسٹ پر نیٹوحملے میں 24پاکستانی فوجیوں کی شہادت ایسے واقعات ہیں ،جنہوں نے انمٹ تکلیف دہ نقوش چھوڑے ہیں۔
کئی معروف شخصیات بھی سال گزشتہ میں ہم سے بچھڑ گئیں،جن میں معروف ادیب اے حمید ،ترقی پسنددانشورحمید اختر،شاعرراغب مراد آبادی،اداکار خیام سرحدی ،معین اختر ،جمیل فخری،رؤف خالد،سیاستدان امین خٹک،بیگم نصرت بھٹو،حاکم علی زرداری،غلام محمد مانیکا،صحافی منہاج برنا ،یوسف خان اور حبیب الرحمن سمیتمتعدد افراد شامل ہیں۔ گورنر پنجاب سلمان تاثیر،سانحہ خروٹ آبادکی فرنزک تحقیقات کرنیوالے پولیس سرجن باقر شاہ کا قتل ،صحافی سلیم شہزاداورولی خان بابرکا قتل بھی ایسے واقعات ہیں ،جنہیں بھلایا نہیں جاسکتا۔تاہم نیٹو سپلائی لائن کی معطلی، شمسی ایئربیس کو واگزاری اور امریکا سے از سرنو تعلقات کی استواری کی جانب پیش رفت،عدالت عظمیٰ کے منصفانہ فیصلے اور جمہوری کلچر کو فروغ دیتے بڑے سیاسی جلسے اہم مثبت تبدیلیاں ہیں،جو شاندار مستقبل کی نوید دے رہے ہیں۔
ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم انفرادی و اجتماعی معاملات میں تعصب و نفرت کے خاتمے ،انصاف کی بالادستی ،ظلم وزیادتی کیخلاف مزاحمت ،تعمیری کرداراور مثبت جدوجہد کو اپنا شیوہ زندگی بنا لیں تاکہ خاندان ،معاشرے اور ملک میں بہتری کی صورتیں نمایاں ہوں۔خدائے بزرگ و برترسے دعا ہے کہ سال نو امن و محبت،اخوت وبھائی چارے اور کامیابی وکامرانی کا سا ل ہو۔آخر میں احمدندیم قاسمی کی شہرہ آفاق نظم کاایک شعر
خدا کرے کہ مرے اک بھی ہم وطن کیلئے
حیات جرم نہ ہو زندگی وبال نہ ہو 

Friday, 30 December 2011

Geo Report- Anti Drug Art-25 Dec 2011

Art exhibition showcases anti drug messages Watch Video

Share

Twitter Delicious Facebook Digg Stumbleupon Favorites More